کور / نور ليکوالان / د دوړو لاندې پروت د پېښور پوهنتون تاریخ (وړومبۍ برخه) – ډاڪټر سهېل خان

د دوړو لاندې پروت د پېښور پوهنتون تاریخ (وړومبۍ برخه) – ډاڪټر سهېل خان

د ډاکټر محمد سهېل خان اتمانزي، سېکرټري باچاخان چئیر، عبدالولي خان پوهنتون مردان دا لیکنه د پېښور پوهنتون د جوړېدو هغه حقیقي تاریخ نه پړده پورته کوي، کوم تاریخ چې استعمارچیانو لهٔ یوې لویې مودې د پښتون قام نه پټ ساتلے ؤ او د دې پوهنتون د جوړښت درناوے ئې د بابړې قصاب، د هارس ټرېډنګ بنسټګر ته ورکولو.

متل دے چې رښتیا راځي نو دروغو کلي وران کړي وي ـــ خو رښتیا پهٔ هر حال کښې رښتیا وي. د انجمن اصلاح الأفاغنه د ازادو مدرسو نه د خدائي خدمتګار تحریک د ازاد اسلامیه هائي سکولونو پورې چې یو سل څلور پنځوس شمېره کښې جوړ شوي وو، او د هغې نه پېښور پوهنتون او پېښور پوهنتون نه د عوامي نېشنل پارټۍ پهٔ تېر قامي حکومت کښې د یو شمېر پوهنتونونو، پوهنځایو او ښوونځو پورې دا ښائي چې قامي تحریک د خپلو ماشومانو مستقبل د پاره څومره کوټلي ګامونه پورته کوي.

د پېښور پوهنتون پهٔ حقله د دې لیکنې دا وړومبۍ برخه ده ــ دوېمې برخې سره به مونږ هڅه کوو چې پښتون وطن کښې د پوهنتونونو د موجوده صورتحال پهٔ ممکنه اثراتو بشپړ راپور خپلو لوستونکو ته وړاندې کړے شو ـــــــ پښتون

د برټش هندوستان شمالي مغربي صوبه چې اوس ئې نوم خېبر پښتونخوا دے، پۀ کال 1901ز کښې جوړه شوه. دې نه مخکښې دا صوبه د افغانستان نه استعمارچي انګرېز تروړلې او د پنجاب حصه ګرځولې وه. د هندوستان وائسراے لارډ کرزن د شاهي باغ پېښور پۀ يوه لويه جلسه کښې د صوبې د جوړېدو اعلان وکړو. (مېډم لعل بها NWFP under British Administration 1901-1919. P.13)

دا صوبه پۀ نهم نومبر کال 1901ز پۀ هغه ورځ جوړه شوه پۀ کومه ورځ چې د تاج برطانيه بادشاه پېدا شوے ؤ. ياده دې وي چې د بادشاه د زېږون ورځ نمانځلو دا طريقه د علامتي تړون ذهن ته ډېر سوالونه راوړي[1]. د جوړښت پۀ وخت صوبه سرحد کښې پنځۀ ضلعې پېښور، هزاره، کوهاټ، بنو او ډېره اسماعيل خان وې. پۀ کال 1901ز کښې دې صوبه کښې يو سل څلور پنځوس تعليمي ادارې وې چې هغې کښې يو سل څلور دېرش پرائمري سکولونه وو. ياده دې وي چې دا ټول سکولونه د حکومت نهــ بلکې د ډسټرکټ بورډ کنټرول کښې وو.                                                                                                          (NWFP Gazetteers: 1914, P. 312)

د هندوستان نورو صوبو کښې د تعليم او تعليمي ادارو تعداد دا ؤ:

مدراس: 19,093                 بمبۍ: 8,216                       مغربي بنګال: 45,922       مشرقي بنګال: 2,776        يوپي:6,773

پنجاب: 2,257                    برما: 3,927                          سي پي: 3,035                    خيبرپښتونخوا: 154

(NWFP Gazetteers: 1914, P.337)

د برني تفصيل نه پۀ اسانه اندازه لګېدې شي چې خېبر پښتونخوا سره د تعلیم د سماجي پرمختګ لپاره کوم سلوک روان ؤ؛ دا سلوک د دې صوبې تعليم، معاش، سماج او اقتصاد نه علاوه ائيني اصلاحاتو سره هم ؤ. د کال 1909ز ائيني اصلاحاتو نه دا صوبه محرومه وګرځولې شوه، وجه ئې دا وښودله چې دا صوبه پسمانده او جاهله ده.

(سلطان روم The North West Frontier province (Khyber PukhtoonKhwa) Essays on History, Oxford Blniv Press, P. 390)

پۀ دې صوبه کښې د مسلمانانو تعداد ټولو نه زيات 93% ؤ باقي مانده 7% کښې البته هندوان د ټولو نه زيات تعداد کښې مېشتۀ وو. ورپسې سیکهان او عيسائيان وو. ولې پۀ تعليم کښې مسلمانان د هندوانو، سیکهانو او عيسايانو نه ډېر وروستو وو. لاندينے جدول به تاسو ته پۀ يو ميل مربع کښې د ټولو مذهبونو استوګن وښائي څوک چې تعليم يافته وو:

ضلع مسلمانان M-F هندوانM-F سکهانM-F عيسائيانM-F
هزاره 17-1 392-41 321-59 858-676
پېښور 27-1 340-124 450-180 915-616
کوهاټ 28-1 330-21 578-90 818-730
بنو 22-0 351-13 572-90 703-639
ډېره اسماعيل خان 32-1 442-44 465-109 834-683

(Census India 1911, Vol XIII, P. 188)

د پورتني تفصيل لۀ مخه د مسلمانانو د تعليم طرف ته پاملرنه ډېره کمه وه. پۀ کال 1853ز کښې لارډ ډلهوزي (وائسراے) د پېښور ضلعې د کمشنر پۀ حېث د مېجر هربرټ اېډورډز تقرري وکړه. مېجر اېډورډز پۀ کال 1855ز کښې اېډورډز مشن سکول شروع کړو. دا اداره پۀ دې صوبه کښې اولنۍ باقاعده تعليمي اداره وه. اېډورډز يو کلک عيسائي ؤ او د مشن سکولونو پۀ ذريعه ئې تبليغ کول غوښتل. هغۀ خپل یو تقرير کښې وئيل چې “دا پۀ مونږ فرض دي چې د مشنري د پاره د خلقو انتخاب وکړو، دا شروع به مونږ خاموشۍ سره خپلو سکولونو نه کوو او د تبليغ لپاره به د مناسب وخت لټون کوو.”

(Eugene Stock, A History of the Church Missionary Society, Vol II, P. 206)

د دې صوبې بله مهمه تعليمي اداره “دارالعلوم اسلاميه” يعني اسلاميه کالجيټ سکول ؤ چې پۀ کال 1911ز کښې روز کيپل او صاحبزاده عبدالقيوم خان جوړ کړے ؤ. پۀ کال 1913ز کښې دا سکول کالج کښې بدل شو. د دې کالج مقصد هم د تعليمي پرمختګ پۀ ځاے سياسي ؤ، کوم چې د روز کيپل د دې بيان نه پته لګي چې وئیلي ئې دي، “د اسلاميه کالج جوړولو لوے مقصد قبائیل او بااثره پښتانۀ خاموشه کول وو.”

(Ross Kepel to Joint Secretary, Govt. of India, Jan 8 1913, Indian Education Proceedings, Vol 9194, May 1913)

د مشنري مقابله کښې “انجمن حمايت اسلام” پۀ کال 1890ز کښې د اسلاميه سکولز بنياد کېښود. پۀ کليوالو علاقو کښې پښتنو مشرانو د حاجي صاحب ترنګزو پۀ سرپرستۍ کښې د مشنري سکولونو مخنيوي لپاره څلور دېرش ازاد اسلامي سکولونه جوړ کړل. د حاجي صاحب دا مدرسې خالصې مذهبي وې او دنیاوي تعلیم پکښې نۀ ؤ. پۀ کال 1910ز کښې دا تحريک شروع شوے ؤ، ولې دا پهــ پېرنګي ښه نۀ لګېده نو د حاجي صاحب د بونېر غزا نه پس ئې پۀ کال 1915ز کښې دا ټولې مدرسې بندې کړلې. د حاجي صاحب د مدرسو بندېز نه پس باچاخان پۀ يکم اپرېل 1921ز د “انجمن اصلاح الافاغنه” بنياد کېښود او ټوله صوبه او قبائيلي علاقه کښې ئې يو سل څلور دېرش “ازاد اسلاميه سکولز” جوړ کړل. دا پۀ حقيقي توګه يو مکمل تعليمي تحريک ؤ او د پښتنو سماجي بدلون کښې ئې ډېر پراخه کار وکړو، خو د انجمن اصلاح الافاغنه سکولونه د ميټرک امتحان لپاره “جامعه مليه دهلي” سره الحاق شوي وو. دا اولنے الحاق ؤ، دې نه مخکښې د پښتونخوا ټول سکولونه د پنجاب پوهنتون سره تړلي وو. پنجاب پوهنتون او جامعه ملیه دهلي دواړه د پښتونخوا د سترس نه بهر وو. کله چې 1937ز کښې پښتونخوا کښې د خدائي خدمتګارو حکومت راغلو او ډاکټر خان صاحب وزير اعليٰ شو نو د تعليم د پرمختګ هلې ځلې ئې شروع کړې. پۀ کال 1937ز د خدائي خدمتګار پارلېماني اجلاس پېښور کښې قاضي عطا الله پۀ اولني ځل د پېښور پوهنتون د جوړولو تذکره وکړه.

(پۀ حواله د ماسټر کريم د ذاتي ډائرۍ)

ډاکټر خان صاحب د 1937ز انتخاباتو کښې مرکزي اسمبلۍ ته ولاړ ؤ نو اپريل 1937ز کښې ئې مرکزي اسمبلۍ کښې د پېښور پوهنتون قرارداد جمع کړلو. پۀ مۍ 1937ز کښې ډاکټر خان صاحب د مرکز نه صوبې ته راوغوښتے شو او هم د هغۀ پۀ سفارش باندې کانګريس پۀ دغه خالي شوي سيټ خان عبدالقيوم خان له ټکټ ورکړو. پۀ جولائي 1937ز کښې خان قيوم د کانګريس غړے غوره شو او پۀ 5 فروري 1938ز کښې پۀ مرکزي اسمبلۍ کښې د ډاکټر خان صاحب جمع شوے قرارداد هم ځکه خان قيوم پېش کړے ؤ. د دغې قرارداد متن داسې ؤ،

“دا اسمبلي ګورنر جنرل او کونسل ته سفارش کوي چې مرکزي حکومت دې د شمال مغربي سرحد صوبې بندوبستي او قبائيلي علاقو لپاره يو سرکاري ويړيا پوهنتون جوړ کړي.”                    (Ghandi Papers, Vol VIII, P. 238) ]خان اعظم، ډاکټر ظهور اعوان، ص[59

مرکزي اسمبلۍ دا قرارداد متفقه طور منظور کړلو، ولې عملي توګه باندې هېڅ هلې ځلې ونۀ شوې. پۀ فروري 1946ز کښې چې کله د خدائي خدمتګارو حکومت جوړ شو نو يو ځل بيا د پېښور پوهنتون هلې ځلې شروع شوې او د صوبې وزير تعليم ښاغلي يحيٰٰ جان خان يو قرارداد پۀ اولسم مارچ 1947ز پېش کړو چې تفصيل ئې دا دے:

The Peshawar University Bill

The Honorable Khan Muhammad Yahya Jan

(Education Minister)

Sir,

I beg to move—

“That the Peshawar University Bill 1947 be referred to a select committee crusting of the following:

  1. Honorable the chief minister             Honorable the revenue د 3, Indian Education Proceedings, Vol 9194, May 1913)1و لويې مقصد ټرائبل او بااثره پښتانۀ، خاموشه کول ؤ صاحبزاده عبدالقيوم خانminister
  2. Honorable the finance minster KS SardarAsadUllah Jan Khan.
  3. LalaMadanLal Mehta Syed Qaim Shah.
  4. Khan Abdul Qayum Khan Swati. SardarIsher Singh.
  5. Khan Abdul Qayum Khan Bar at law Khan HabibUllah Khan.
  6. Khan SardarBahadur Khan. NawabQutbuddin.
  7. The Deputy Speaker. Honorable Minister of Education.
  8. The Advocate General.

The report thrown by the next session.

جناب والا ! اس بل کے پیش کرنے کا مقصد اس منفرد ایوان کے اوپر ظاہر ہے۔ پنجاب یونیورسٹی کے ساتھ اب تک ہمارا الحاق تھا۔ ہم کئی سالوں سے یہ محسوس کرتے آئے ہیں کہ ہمیں اپنے صوبے کی ایک جدا یونیورسٹی قائم کرنی چاہیئے لیکن حالات ایسے تھے کہ ہم اس خواہش کو پورا نہیں کرسکتے تھے۔ آج خدا کے فضل سے ہم اس پوزیشن میں ہیں کہ اپنے لئے ایک جدا یونیورسٹی قائم کرلیں۔ اس یونیورسٹی کے قائم کرنے کے دو مقاصد ہیں:

 ایک تو یہ کہ پنجاب یونیورسٹی ہماری ضروریات کو آئندہ کیلئے پورا نہیں کرسکتی۔ پراونشل اٹانومی کیلئے ضروری ہے کہ اس کا کلچر، زبان اور جو کسمٹز ہیں اور اس کا انتظام ہمارے صوبے کے لوگوں کے ہاتھوں میں ہو۔ دوسری اہم ضرورت ہمیں یونیورسٹی کی اس لئے ہے کہ پنجاب یونیورسٹی بہت وسیع ہوگئی ہے اور اس کا دائرہ پنجاب، کشمیر، صوبہ سرحد اور پنجاب کے بہت سی ریاستوں تک ہےجس کا انتظام میں یہ کہہ سکتا ہوں کہ وہ ایک مشین کی طرح کرسکتا ہے۔ جو یونیورسٹی کا سسٹم ہونا چاہیئے وہ یونیورسٹی نہیں کرسکتی۔ اسی لئے ضروری ہے کہ ہم اپنے صوبے میں جدا یونیورسٹی قائم کریں۔پنجاب یونیورسٹی کی ضرورت ہم مدت سے محسوس کررہے ہیں کہ اس کی شاخیں تقسیم ہوں۔ یہ ان کے لئے مدد ہوگا۔ مجھے یقین ہے کہ ہماری یونیورسٹی کے بننے سے پنجاب یونیورسٹی کو ایک قسم کی مدد ملے گی اور اس کا خیرمقدم کریں گے۔ میں ان الفاظ کے ساتھ اس بک کو اس منفرد ایوان کے سامنے پیش کرتا ہوں۔

  • خان عبدالقیوم خان سواتی:

جناب والا! آج کا دن میں اپنے صوبے کیلئے ایک نہایت مبارک دن خیال کرتا ہوں۔ جمعہ کا دن ہے جو اسلامی نگاہ سے بھی مبارک دن ہے اور بہت مدت کے بعد ہمارے صوبہ کی وہ خواہش آج کے دن پوری ہورہی ہے جسکے لیے ہم مدت سے سوچ رہے تھے اور جدوجہد کررہے تھے اور آج وہ خواہش ہمارے نوجوان آنریبل وزیرتعلیم کے ہاتھوں سے پوری ہوئی۔ و یسے بھی گزشتہ سال بھر میں میں یہ دعوے سے کہہ سکتا ہوں کہ انہوں نے تعلیمی دائرے میں اس قدر انقلاب پیدا کردیا ہے کہ صوبہ سرحد کے تمام باشندوں کو اس پر فخر کرنا ہوگا۔ میں آنریبل وزیرتعلیم کو مبارکباد دیتا ہوں اس کے ساتھ عرض کرنا چاہتا ہوں کہ اس بل کی تیاری کے تمام STAGES سے میں واقف ہوں۔ اس بل کی تیاری کے واسطے ہمارے آنریبل وزیرتعلیم نے جو کمیٹی مقرر کی تھی اس کے ممبران نے جو کام کیا ہے میں اس سے بھی واقف ہوں ۔ ان میں سے دو تین اصحاب کا شکریہ ادا کئے بغیر نہیں رہ سکتا ہوں کہ انہوں نے اس بل کی تیاری میں سب سے زیادہ کام کیا ہے۔ ایک تو پرنسپل ایڈورڈز کالج پشاور ہیں اور دوسرے قاضی محمد اسلم خان ایڈوکیٹ پشاور جنہوں نے نہ صرف پشاور کے اندر بلکہ تمام ہندوستان کی یونیورسٹیوں اور ان کے قوانین کو دیکھنے کے لئے دورے کئے اور اپنا قیمتی وقت ہمارے لیے صرف کیا اور یونیورسٹی میں جاکر بذات خود اس جگہ کے کارکنان سے تبادلۂ خیالات کیا جس سےہمارا یہ بل تیار ہوا۔ ان کے ساتھ اس بل کی تیاری میں ایک دوسری قابل ترین ہستی بھی شامل ہے جس پر ہمارا صوبہ جتنا بھی فخر کرے وہ کم ہے، وہ شیخ عبدالحمید صاحب موجودہ سینئر سب جج پشاور ہیںٗ جن کی ذات کسی تعارف کی محتاج نہیں۔ اس صوبے کا ہر ایک باشندہ ان کو جانتا ہے۔ اگرچہ وہ باہر دورے پر تشریف تو نہیں لے گئے مگر انہوں نے اس بل کی تیاری میں دوسرے دو ممبران سب کمیٹی سے مل کر نہ تو اپنی صحت کی پرواہ کی ہے اور نہ ہی آرام کی، جس کا نتیجہ یہ ہے کہ یہ بل آپ کے سامنے پیش ہورہا ہے۔ میں یقین دلاتا ہوں کہ اس یونیورسٹی کے آئندہ مدارج طے کرنے کے ساتھ ساتھ جب آنریبل ممبران اس بل کو ملاحظہ فرمادیں گے تو ان کو معلوم ہوگا کہ ہم کیوں اس قدر اپنی جدا یونیورسٹی کی ضرورت محسوس کرتے ہیں، اس لئے کہ جب بھی ہم اپنے نوجوانوں کو بعض شعبہ جات تعلیم کے لئے باقی صوبوں میں داخلہ کے لئے بھیجتے تھے تو اکثر اوقات ان کے داخلوں میں ہم ناکام ہوتے تھے، حالانکہ اس انقلاب کے زمانے میں جو دنیا میں آرہا ہے اور ہندوستان اور خود ہمارے صوبے میں بھی آرہا ہے، ہمیں سب سے زیادہ انقلاب کی ضرورت تعلیم میں ہے، جس کو ہماری اپنی یونیورسٹی کا قیام ہی پورا کرسکتا ہے اور اپنی یونیورسٹی اور اس کے ماتحت تمام شعبہ جات تعلیم کے کالجوں کے قیام سے ہم باقی صوبوں کی محتاجی سے بچ سکتے ہیں۔ جب میں نے پوسٹ وار پلانز پر نکتہ چینی کی تو میرے بہت سے دوست غالباً خفا بھی ہوں گے مگر میں نے نکتہ چینی اس نظریہ کی بناء پر صوبے کی بہتری کے لئے کی تھی ۔ میں صرف اسی ایک نتیجے کو محسوس کرتا ہوں جو اس انقلاب سے پیدا ہونے والا ہے اور میں چاہتا ہوں، ہمارا صوبہ ہندوستان میں کسی سے پیچھے نہ رہے۔ میں ان الفاظ کے ساتھ اس بل کے پیش کی جانے کی تحریک کی تائید کرتا ہوں اور اپنے تمام دوستوں سے عرض کرتا ہوں کہ وہ بھی میرے ساتھ اس میں شریک ہوں اورآنریبل وزیرتعلیم کو مبارکباد دیں۔

  • خان صاحب سردار اسد اللہ جان خان:

جناب والا! میں نہیں جانتا کہ میں اپنے آپ کو مبارک باد دوں یا صوبہ سرحد کو مبارکباد دوں؟ جو احسان ہمارے صوبے پر ہمارے آنریبل وزیرتعلیم نے اس یونیورسٹی اس دارالعلوم کو علیٰحدہ بنانے پر کیا ہے تو محض میں اتنا کہتا ہوں “متفق گردید رائے بوعلی بارائے من”۔عرض یہ جناب والا کہ ہر ایک قوم ہر ایک علاقہ اور ہر ایک ثقافت کا ایک مزاج عقلی ہوتا ہے۔ اگر ہم صوبہ سرحد کے رہنے والے ہیں تو ہمارا مزاج عقلی اور پنجاب کا اور سی پی، یو پی کا اور ہوگا، گوکہ ہم قومیت میں ایک ہیں مگر اس حساب سے ان میں اور ہم میں زمین اور آسمان کا فرق ہے۔ بطور مثال کے میں عرض کروں گا کہ ایک نہایت سیدھا سا مذہب اسلام کو لیں؛ ملک حجاز میں اس مذہب نے ظہور کیا تو ان کے جو تعلیمات ہیں وہ حجازی ہیں۔ وہ تعلیمات عجم میں آئے، وہاں عجمیوں نے اس کی شکل بدل دی۔ جس وقت یہ مذہب ایران آیا تو اس نے یہاں اور شکل اختیار کرلی ،جس وقت افغانستان میں یہ مذہب اسلام آیا یہاں کچھ اور شکل اختیار کرلی کہ صرف اسلام کتاب میں نظر آتا ہے۔ اگر صورت سے نہیں اس کا مطلب یہ ہے کہ ایک خیال اور ایک قوم ایک خطہ نکل کر دوسرے خطہ میں آتا ہے تو پھر وہ دوسری شکل اختیار کرلیتا ہے۔ اپنی ذہنیت کے مطابق یعنی دوسری قوم اپنی مزاج عقلی کے سانچے میں ڈال لیتی ہے۔ جس طرح ہم ڈیموکریسی لیتے ہیں، یورپ کے ڈیموکریسی کو دیکھ کر حیران ہوتا ہوں۔ انگریز ہمیشہ کہتے ہیں کہ ہمارا ملک ڈیموکریٹ ہے جبکہ اس کے ساتھ صنعت Aristocratic لگی ہے۔ ڈیموکریسی ہندوستانی کر سکتے ہیں مگر خالص ڈیموکریٹک جب ہم یونان روم میں دیکھتے ہیں وہ اور جگہوں میں نہیں دیکھتے۔ انگریزوں نے اسے اپنے مزاج عقلی کے مطابق ڈھال دیا۔ وہ چیز جو باقی ہندوستان کے صوبوں کے لئے انہوں نے تیار کی ہے ۔ ہماری ذہنیت ان کو نہیں سمجھ سکتی ہے۔ اس لئےصوبہ سرحد کو اس چیز کی ضرورت ہے کہ ان کے سمجھنے کیلئے ایسی چیز ہو کہ یہ لوگ خود اسے سمجھ سکیں مگر وہ چیز محال ہے جو کہ ہمارے دماغ کی پیداوار نہیں، ہم اسے سمجھ نہیں سکتے۔ ایک چیز کو فالو کرتے ہیں مگر سمجھنے کی طاقت نہیں۔ عرض یہ ہے کہ یہ یونیورسٹی بِل آنریبل وزیرتعلیم نے اتنی تکالیف کے بعد اپنے دوستوں کے ذریعہ سے اس ایوان کے سامنے پیش کی ہے تو یہ روز مبارک ہے، یہ بل مبارک ہے۔ وہ دن خدا کرے ہم تمام زند ہ ہوں اور اس پرعمل درآمد کو دیکھیں۔ اس سے جو قوم چار سال کے اندر ترقی کرے، صوبہ سرحد کے اندر ایک سال کے اندر ابھر آئے گی۔ یونان نے اتنی کم آبادی کے باوجود جو ترقی کی ہے تو محض طریقۂ تعلیم تھا۔ کوئی قوم ترقی نہیں کرسکتی جسکی تعلیم کا طریقہ بہتر قسم کا نہ ہو۔ میرے خیال میں یونان کی طرح ہمارے خطے میں آدمی پیدا ہوسکتے ہیں وہ اس پر کہ جو کمی یہاں تھی وہ پوری ہوگی۔ میں ان الفاظ کیساتھ آنریبل وزیرتعلیم کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔

  • پير شهنشاه کوهاټ:

جناب صدر! زۀ د خپل وزير تعليم او خدائي خدمتګار وزير اعليٰ صاحب شکريه ادا کوم او هغوي له مبارکي ورکوم چې د يو خدائي خدمتګار پۀ لاسو زمونږ د يونيورسټۍ بنياد کېښودلے کيږي. زمونږ زلمے وزير تعليم به همېشه دې کوشش کښې ؤ او فکر به ئې کوهــ چې څۀ رنګ زمونږه خپله يونيورسټي جوړه شي، ځکه چې زمونږ ژ‌به، رسم و رواج د نورو نه جدا دي، څنګه چې پنجاب دے، دغه رنګ ضروريات د نورو صوبو هم دي. دا زمونږ قومي خواهش ؤ او ډېرې مودې راهسې زمونږه صوبې دا کوشش کوهــ چې خپله يونيورسټي جوړه کړي چې زمونږ قوم ترې فائده واخلي. د الله تعالٰي فضل دے چې زمونږ دا کوشش نن پوره شو او د يو خدائي خدمتګار پۀ لاسو پوره شو چې هغۀ د اولې ورځې راهسې تعليم سره دلچسپي لرله. زۀ اميد کوم چې کله دا يونيورسټي جوړه شي نو زمونږ قوم به پۀ لږه موده کښې داسې تعليم يافته شي څنګه چې مصطفٰي کمال پاشا خپل قوم ترکي تعليم يافته کړو. څنګه چې صوبه سرحد نورو خبرو کښې د صوبو سره مقابله کوي، دوي به تعليم کښې هم پرمختګ وکړي. دې څو خبرو سره زۀ انرېبل وزيرتعليم له مبارکي ورکوم.

  • سردار رام سنگھ:

جناب صدر! ایوان کے ہر طرف سے آنریبل وزیرتعلیم کو یونیورسٹی بل پیش کرنے پر مبارکباد دی جارہی ہے تو میں بھی اس میں شریک ہوتا ہوں۔ ہماری مدت سے یہ خواہش تھی کہ صوبہ سرحد بھی اس قابل ہو کہ اس کی اپنی یونیورسٹی ہو۔ ہم یہ محسوس کرتے تھے کہ ہمارے لڑکے انجینئرنگ، میڈیکل اور ویٹرنری کے تعلیم کی حصول کے لئے باقی صوبوں کے کالجوں میں داخل ہوتے تھے تو ہم محسوس کرتے تھے لیکن کبھی اپنے آپ کو قابل نہیں سمجھتے تھے کہ ہم اپنے صوبے میں علیٰحدہ یونیورسٹی بنائیں گے جبکہ ہمارے لئے مواقع باقی صوبوں میں بند ہیں، کس طرح اس کو عبور کرلیا جائے؟ آج خدا کا شکر ہے کہ پاپولر گورنمنٹ کے وقت آنریبل وزیر تعلیم کی وجہ سے جو تعلیم کے ماہر ہیں، آج ہمیں موقع نصیب ہوا کہ ہم اس ایوان میں یونیورسٹی بل پیش کررہے ہیں۔ جب آنریبل وزیرتعلیم نے ایجوکیشنل ایڈوائزری کمیٹی مقرر کی تو میں ان کے ساتھ رابطے میں ہوں۔ میں دیکھ رہا تھا  آنریبل وزیرتعلیم کوشاں ہے کہ جلدی یونیورسٹی قائم ہوجائے؛ عبدالقیوم سواتی نے جس طرح کہا ہے کہ ایڈوائزری کمیٹی کے ممبران نے محنت سے کام کیا ہے میں کہتا ہوں کہ ایوان کو اس کا شکرگزار رہنا چاہیئے۔ میں آنریبل وزیرتعلیم کو مبارکباد پیش کرتا ہوں ۔ خدا کرے کہ وہ وقت جلد آئے کہ ہم یونیورسٹی کے امتحانات یہاں خود شروع کردیں تو اس طرح میڈیکل و ویٹرنری کالج بھی کھول دیں۔

  • خان عبدالعزيز خان

جناب صدر مجلس! کله چې دا بل پۀ دې معزز ايوان کښې وړاندې کړې شو نو زما خيال فوراً هاغه تقرير ته لاړو کوم چې تېر سيشن کښې انرېبل وزير تعليم صاحب کړے ؤ. تېر ځل چې کله هغهــ خپل ذاتي تقرير کوهــ او چې کوم پروګرام ئې مونږ ته پېش کولو او چې کله مونږ د خپلې صوبې بجټ ته وکتل نو دا کار ناممکنه ښکارېدو، خو چې کله د قدرت امداد وي نو هر کار اسان شي ـــ پۀ دغه تقرير کښې مونږ ته ووئيلے شول چې تعليم به د ټولو پښتنو کور ته رسولے شي. کله چې بجټ سيشن شروع شو او ما وې کله به د محکمه تعليم د پرمختګ دا پروګرام به سر ته ورسي. کله چې زمونږ مخې ته د يونيورسټۍ دا بِل راغلو نو زما يقين وشو او زمونږ د هر پښتون بچي تعليم يافته کولو دا دعويٰ به سر ته ورسي. دې بِل پېش کولو سره به زمونږ دا دعويٰ پوره شي. جناب صدر! اګرچې مونږ خپل بچي يونيورسټۍ ته لېږل، کله چې يوه مور د دوو بچو سره مخ وي؛ يو خپل وي او يو پردے، نو مور همېشه خپل بچي له توجه ورکوي. پنجاب ته بچي لېږل زمونږ ضرورت ؤ او نن زۀ د انرېبل وزيرتعليم د شکريه ادا کولو نه مخکښې دا توقع هم لرم چې چونکې دا يونيورسټي د پښتنو د پاره ده نو دې کبله دې د دې نوم “سرحد يونيورسټي” کېښودې شي. مونږ به د وزير تعليم صاحب ډېر شکرګزار يو. زۀ دعا کوم چې وزير تعليم دې الله خپل مقصد کښې کامياب کړي.

  • لالا کوٹو رام

جناب صدر! جس صداقت سے بھرے ہوئے الفاظ میں میں یونیورسٹی بل کو پیش کرنے پر ہمارے ممبر صاحبان نے آنریبل وزیرتعلیم کو مباکباد پیش کی ہے، میں بھی اس میں شریک ہوتا ہوں۔ میرا  ان کے ہر لفظ سے اتفاق ہے۔ میرے خیال میں آج وہ دن ہے کہ ہم اپنے صوبے کے لوگوں کو مباکباد پیش کرسکتے ہیں ۔ میرا خیال ہے کہ آج تک ہمارا صوبہ گو کہ پنجاب کا حصہ رہا ہے، ہم ۱۹۰۱ میں ان سے جدا ہوئے مگر ابھی تک ہم پنجاب کے محتاج رہے ہیں۔ آج ہمارا سر اونچا ہوگیا۔ ہمارا صوبہ اب ایک خودمختار صوبہ ہے۔ اس میں جو کمی تھی وہ ہم پورا کردیں گے۔ میں یہ عرض کروں گا اور میرا  یہ خیال ہے کہ ہماری یونیورسٹی جو قائم ہورہی ہے صوبہ سرحد میں، میں یہ محسوس کرتا ہوں۔ جب ہندوستان کے نقشے پر نظر ڈالتا ہوں؛  مدراس، جنوب کی طرف اور پھر بنگال کی طرف گویا کہ یہ صوبے ہندوستان کے جسم کے پاؤں او ر پٹھہ نظر آتے ہیں مگر جہاں ہمارا صوبہ واقع ہے تو ایسا معلوم ہوتا ہے کہ وہ ہندوستان کا سر ہے۔ میں یہ سمجھتا  ہوں کہ آج ہم نے اپنے سر کو پالیا ہے کہ وہ ہندوستان کا سر ہے۔ اس دماغ اور سر سے ایسی روشنی نکلنی چاہیئے کہ جس سے تمام ہندوستان روشن ہو۔ میں ان الفاظ کے ساتھ آنریبل وزیرتعلیم کو مبارکباد پیش کرتا ہوں ۔ ایک بات اور کہتا ہوں کہ مجھے معلوم ہورہا ہے کہ اس میں ہماری تعلیم جو ہوگی وہ اپنی زبان میں ہوگی مگر یونیورسٹی بِل جو پیش کیا گیا ہے ہم دیکھ رہے ہیں کہ یہ انگریزی زبان میں ہے۔ میں نہیں سمجھتا ہوں کہ ہم کب تک انگریزی کے غلام رہیں گے؟ انگریز تو جون سال ۱۹۴۸ء میں جارہے ہیں،  ایسا معلوم ہوتا ہے کہ ان کی زبان ہمیشہ ہم پر حاوی ہوگی۔ یونیورسٹی بل کو ابھی دیکھا نہیں کہ اس میں ذریعہ تعلیم کیا ہوگی؛  ہندوستانی زبان اردو ہوگی جو تمام ہندوستان کی زبان ہے یا کوئی اور زبان یعنی انگریزی؟

  • آنریبل جان محمد یحی ٰجان

میرے دوست نے اس تقریر میں یہ فرمایا تھا کہ ہم نے جیل میں تعلیم کے بارے میں واردھا سکیم پڑھی ہے، ہم اس واردھا سکیم پر عمل کر رہے ہیں پھر بھی وہ  یہ نہیں سمجھے کہ وہ تعلیم اُردو میں ہوگی یا کسی اور زبان انگریزی میں۔

  • لالا کوٹورام

ہمیں اپنے صوبہ پر فخر ہے اور یہاں ہماری اپنی زبان ہوگی؛ مگر میں پھر بھی دیکھتا ہوں کہ ہمارے جتنے بھی بل ہیں وہ انگریزی زبان میں آرہے ہیں۔ پتہ نہیں کہ جون سال ۱۹۴۸ء میں ہم جب آزاد ہوجائیں گے پھر بھی انگریزی میں آئیں گے یا نہیں؟

  • انرېبل ډاکټر خان صاحب:

صاحب صدر! زۀ د دې وجې ونۀ درېدم چې پۀ دې بل باندې د هاؤس نه مبارکي واخلم ـــ دا يوه معمولي خبره ده. دا ددې حکومت فرض ؤ او مونږ خپل فرض پوره کړل. دا واقعه د مبارکۍ نۀ ده، چونکې زمونږ د خلقو د غلامۍ دماغ نۀ بدلېږي، هغوي خپل مينځ کښې جګړې کوي پۀ څۀ باندې؟ يو وائي هندوستان کښې به هندي وي، بل وائي اردو به وي. د هندوستان د ازادۍ دې سره څۀ تعلق دے؟ نن پۀ ټول هندوستان کښې انګرېزي وئيلې کېږي. عام تعليم پۀ خپله ژبه کښې پکار دے خو د هغې د پاره زمونږ ذرائع څۀ دي؟ د مطلب کار مونږ نورو ژبو کښې کوو. پۀ مونږ باندې ډېرې پابندۍ دي. يو وائي اردو کښې به تعليم وي بل وائي هندۍ کښې؛ زۀ وايم چې مونږ اردو کښې ترقي نۀ شو کولې. د اردو مهذبه خبرو باندې پښتانۀ نه پوهيږي. زۀ خو د اردو مذکر او مؤنث هم نۀ شم پېژندے. مونږ د انقلابي ذهن خلق يو، د ژبو پۀ ځاے د قوم د ترقۍ لپاره نظام جوړول غواړو. ژبو باندې نن د خپلو ليډرانو د کاميابۍ بهانې جوړول دي. چې هندي وائي هغه هندو شو، چې څوک انګرېزي وائي هغه انګرېز، چې څوک پښتون وائي هغه پټهان ـــ دا خپل ځان له دهوکه ورکول دي. زمونږ پارټي انقلابي پارټي ده. پۀ دې خبرو د هاؤس وخت ضائع کول ښۀ کار نۀ دے.

  • سردار پرتاب سنگھ

جناب صدر! سب سے پہلے میں آنریبل وزیر تعلیم کو مبارکباد دیتا ہوں کہ انہوں نے ہمارے صوبے کیلئے ایک بڑا انتظام کیا ہے کہ اس یونیورسٹی بل کو تیار کرکے اس معزز ایوان کے سامنے پیش کیا۔ اس میں شک نہیں کہ ہمارا الحاق پنجاب یونیورسٹی سے تھا لیکن اس میں ہمارا اتنا حصہ تھا کہ کئی بار ہمارے نوجوان وہاں داخل ہونے کے لئے گئے مگر وہاں سے ان کو نا امید واپس آنا پڑا۔ جس حد تک اس میں ہمارا حصہ تھا جو تھا وہ کم تھا جس کی وجہ سے ہمارے صوبے میں انجینئرنگ کے لئے آدمی نہیں ملتے تھے۔ اس کمی کو پورا کرنے کیلئے باہر صوبوں سے منگوا کر ان کو نوکریاں دی جاتی تھیں۔ اب امید ہے کہ ہمارے صوبے میں ایسے نوجوان تعلیم حاصل کرکے اپنے صوبے کے کئی خدمات کو ہاتھ میں لیں گے۔ اس میں شک نہیں کہ ہمارا صوبہ تعلیم میں اوروں سے پسماندہ ہے مگر اس یونیورسٹی سے جو کمی ہے وہ پوری ہوجائے گی۔ میں ان الفاظ میں آنریبل وزیرتعلیم کو مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

  • لالہ کیول رام

جناب صدر! اگر یہ بل پیش نہ ہوتا تو شاید Construction in terms ہوتا۔ ایک طرف تو ہم کہتے ہیں کہ ہم کو پراونشل اٹانومی مل چکی ہے اور دوسری طرف ہمارے دماغ کا انحصار پنجاب پر ہوتا ہے۔ اب ہمیں صوبے کی حالت کے مطابق تعلیم دی جائےگی۔ ہمارے اپنے صوبے کےگریجویٹ MBBS, BTS, Law Graduatesہوں گے۔ میں اس پر خوش ہوں اور آنریبل وزیر تعلیم صاحب اور ممبران ایڈوائزری کمیٹی کو مبارکباد دیتا ہوں کہ پٹھان قوم کی مدتوں کی تمنّا پوری کی۔ آنریبل وزیرتعلیم نے اپنے ذاتی تجربہ سے پورا فائدہ اُٹھایا ۔ میں ان الفاظ کےساتھ وزیرتعلیم کو مبارکباد دیتا ہوں ۔

آنریبل وزیرتعلیم محمد یحیٰ جان خان

جناب والا! اس وقت نہایت شرمندگی محسوس کررہا ہوں کہ جس وقت میں نے بِل پیش کیا تو ایک ایک صاحب کو کہا کہ اس پر تقریر کریں۔ میں یہ خیال نہیں کرسکتا تھا کہ ہر طرف ہر ایک صاحب میری تعریف کرے گا۔ اس لئے میں اس نتیجہ پر پہنچا ہوں کہ یہ تعریف میں نے خود کرائی ہے۔ بہرحال، مجھے خوشی ہے کہ ہمارے اس قدم پر تمام ایوان نے خوشی کا اظہار کیا ہے۔ خدا کرے کہ اس یونیورسٹی سے پٹھان اتنا فائدہ اُٹھائیں کہ جس کا ہم خواب دیکھ رہے تھے۔ ان الفاظ کےساتھ میں اس معزز ایوان کے سامنے عرض کرتا ہوں کہ اس بل کو سلیکٹ کمیٹی کے سپرد کرے ۔

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ (نور راتلونکې ګڼه کښې)

[1] دا طریقه د انګرېز استعمار پخه طریقه وه ـــ د فورټ ولیم کالج بنیاد وائسراے لارډ وېلزلي د ټیپو سلطان شهید د شهادت پهٔ ورځ کال پس ایښے ؤ. دغسې څوارلسم اګست هم دوېم نړیوال لام کښې د جاپان د ماتې تاریخ دے. انګرېز استعمار دغسې خپل تاریخ ژوندے ساتي.

شريک ئې کړئ

دا هم په زړه پورې مطلب دی

پښتون حلاج*: یو تاثر

پښتون حلاج*: یو تاثر تاثر: ډاکټر همدرد ایسپزے پهٔ تاثر تاثر: حیات روغانے زما نا …

ځواب دلته پرېږدئ

ستاسو برېښناليک به نه خپريږي. غوښتى ځایونه په نښه شوي *